Urdu Mahfil I Made "www.urdumahfil.com" Website for those people who love to read latest sad sashayri,Articals and latest urdu news. Every day i publish new posts releted these topics. Thanks for vistiing us.

یہاں آپ کو تازہ ترین خبریں دلچسپ اشعار،مضامین اور دینی مسائل وغیرہ کے بارے مے جانکاری ملے گی

تازہ ترین

بابری مسجد کے خلاف فیصلے پر ہمیں شدید تکلیف ہے



urdumahfil


بابری مسجد کے خلاف فیصلے پر ہمیں شدید تکلیف ہے

ہندوستان کی تمام سیاسی پارٹیوں، خاص کر کانگریس اور بھارتی جنتا پارٹی، اس کے ساتھ ساتھ کئی شِدّت پسند ہندو تنظیموں، صوبائی اور مرکزی حکومتوں نے بابری مسجد کو شہید کرنے میں سب سے اہم کردار ادا کیا، بابری مسجد کا مقدّمہ پہلے ہائی کورٹ اور پھر سپریم کورٹ میں داخل کیا گیا مگر سپریم کورٹ نے بھی بابری مسجد کے خلاف ناانصافی سے کام لیا اور غیر قانونی طریقے سے بابری مسجد کے خلاف فیصلہ دے کر انصاف کے مندر عدالت کی عزّت کو تار تار کر دیا، اس طرح سے 500 سال سے موجود بابری مسجد کو بُت خانے میں بڑی آسانی سے تبدیل کر دیا گیا، اس فیصلے کے ذریعے مسلمانوں کے ایمان پر حملہ کیا گیا اور اُنھیں شدید تکلیف پہونچائی گئی، ہندوستان میں موجود 80 کروڑ ہندوؤں میں سے مجھے اپنی زندگی میں کوئی بھی ایسا ہندو نہیں ملا جو بابری مسجد کی دوبارہ تعمیر کی حمایت کرتا

میں قوم کے دلالوں، منافقوں، اسلام اور مسلمانوں کے دشمنوں کے ہاتھ میں ہاتھ اور آواز میں آواز ملانے والوں سے بابری مسجد کے سلسلے میں ذرا بھی خیر کی توقّع نہیں رکھتا اور نہ ہی رکھوں گا، کیوں کہ یہی لوگ بابری مسجد کے اصلی سوداگر ہیں، ہمیں ذاتی طور پر بابری مسجد کے خلاف فیصلے سے شدید تکلیف ہوئی ہے، ہمیں بابری مسجد چاہئے تھی اور ہر حال میں چاہئے تھی، لیکن ہمیں نہیں ملی، ہم بہت مجبور تھے، جو بابری مسجد کی بازیافت کے لئے کچھ کر نہیں کر سکے، بابری مسجد کے خلاف فیصلے سے ہمیں دِلی تکلیف پہونچی ہے، ہم مجبور ہیں لیکن یہ بھی عزم رکھتے ہیں کہ ایک دن ہم بابری مسجد کی تعمیر ضرور کریں گے

نیپال کے وزیرِ اعظم نے ہندوستان کے 80 کروڑ ہندوؤں کی آستھا کو تکلیف پہونچانے والا بیان دیا ہے، اُن کے بیان پر ہندوستان کی میڈیا دن و رات رونا رو رہی ہے، ایک قومی چینل کی اینکر نے کہا ہے کہ ہندوستان میں مسلمان پانی پی پی کر نیپال کے وزیرِ اعظم کی مخالفت کر رہے ہیں، مجھے لگتا ہے کہ ایسا نہیں ہے، ہو سکتا ہو کہ کچھ دلال اور منافق نیپال کے وزیرِ اعظم کہ مخالفت کر رہے ہوں لیکن ہم جیسے مسلمان نہ تو نیپال کی مخالفت کر رہے ہیں اور نہ ہی اس مسئلے سے ہمیں کوئی لینا دینا ہے، نیپال کے وزیرِ اعظم کے بیان پر ہندوستان کی حکومتوں، میڈیا اور ہندوؤں کو جو کرنا ہے وہ کریں، ہم تو بابری مسجد کے خلاف فیصلے کے دن سے ہی اللہ تعالیٰ سے دعائیں کر رہے ہیں کہ اے اللہ! تو بابری مسجد کی جگہ رام مندر تعمیر کرنے والی کمیٹی میں شدید اختلاف پیدا کر دے، حکومتوں کے تختے الٹ دے، ججوں کو عبرتناک سزا دے اور بابری مسجد کی دوبارہ تعمیر کے لئے سبیل پیدا کر دے..آمین

محمد وسیم ابن محمد امین، ریسرچ اسکالر
شعبہء اردو، جامعہ ملّیہ اسلامیہ، نئی دہلی

کوئی تبصرے نہیں:

ایک تبصرہ شائع کریں

Post Top Ad

Your Ad Spot

???????